گناہ ٹیکس کے تحت سگریٹ دس روپے مہنگا کرنے کی سمری کابینہ ڈویژن کے حوالے

اسلام آباد: وزارت صحت نے تمباکو نوشی کے انسداد کے تحت متعارف کرائے جانے والے گناہ ٹیکس عائد کرنے کی سمری کابینہ ڈویژن کو ارسال کر دی ہے۔

پروپاکستانی اردو کو دستیاب معلومات کے مطابق گناہ ٹیکس کی سمری وزارت خزانہ کی مشاورت سے تیار کی گئی ہے۔

کابینہ ڈویژن کو بھیجی گئی سمری میں سگریٹ اور مشروبات پر گناہ ٹیکس عائد کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔


مزید پڑھیں

حکومت کا سگریٹ پینے والوں پر گناہ ٹیکس لگانے کا فیصلہ


سمری میں سگریٹ پیکٹ پر10 روپے گناہ ٹیکس عائد کرنے کی سفارش کے ساتھ ساتھ سگریٹ کی تمام کیٹگریز پر گناہ ٹیکس عائد کرنے کی بھی سفارش کی گئی ہے۔

کابینہ ڈویژن کو بھیجی گئی دستاویز میں مشروب کی 100ملی لیٹر بوتل پر دو روپے گناہ ٹیکس عائد کرنے کی سفارش کی گئی ہے۔

ذرائع کے مطابق گناہ ٹیکس کے نفاذ سے سگریٹ مزید مہنگے ہوں گے، اور توقع ہے کہ گناہ ٹیکس سے سالانہ 60 تا  70 ارب روپے کی آمدن حاصل ہوگی۔ حکومتی ذرائع کا کہنا ہے کہ اس رقم کو پاکستان میں  شعبہ صحت کی بہتری پرخرچ کیا جائے گا۔

ذرائع کا مزید کہنا ہے کہ گناہ ٹیکس سے حاصل ہونے والی آمدن وزیراعظم ہیلتھ پروگرام کے تحت استعمال ہوگی۔

تازہ ترین اعداد وشمار کے مطابق ملک میں سالانہ چار ارب سے زائد سگریٹ کے پیکٹ فروخت ہوتے ہیں۔

یاد رہے کہ فلپائن کے بعد پاکستان دنیا کا دوسرا ملک ہے جہاں سگریٹ پر گناہ ٹیکس عائد کیا جا رہا ہے۔ اس سے قبل فلپائن میں اسی نوعیت کا ٹیکس عائد کیا جا چکا ہے۔


مزید پڑھیں

اوورسیز پاکستانیوں کے موبائل فون لانے پر ٹیکسز کا نفاذ، پی ٹی آئی حکومت مشکل میں


رواں برس کی ابتداء میں سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات میں بھی سگریٹ اور مشروبات پر ’’ ضریبۃ القیمہ المضافۃ ‘‘ کے نام سے ٹیکس عائد کیے گئے تھے۔