جنرل (ر) راحیل شریف کی عمران خان سے ملاقات

اسلام آباد: سعودی عرب کی جانب سے تشکیل کردہ اسلامی فوجی اتحاد کے سربراہ اور سابق آرمی چیف آف پاکستان جنرل (ر) راحیل شریف نے وزیراعظم پاکستان عمران خان سے ملاقات کی ہے۔

پاکستان کے دو روزہ دورے پر آئے ہوئے اسلامی فوجی اتحاد کے سربراہ جنرل (ر) راحیل شریف کی عمران خان سے ملاقات وزیراعظم ہاؤس میں ہوئی جس میں خطے کی سیکیورٹی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا گیا ہے۔

اس موقع پر وزیراعظم عمران خان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب نے ہمیشہ مشکل وقت میں پاکستان کا ساتھ دیا، پاکستان بھی سعودی عرب کے ساتھ ہر ممکن تعاون جاری رکھے گا، دونوں ممالک کے درمیان دفاع سمیت تمام شعبوں میں تعاون بڑھایا جارہا ہے۔

قبل ازیں جنرل (ر) راحیل شریف نے چیئرمین سینیٹ محمد صادق سنجرانی سے بھی پارلیمنٹ ہاؤس میں ملاقات کی ہے۔

پارلیمنٹ میں ہونے والی ملاقات میں اہم بین الاقوامی امور پر گفتگو کی گئی، اس موقع پر اراکین سینیٹ اور اسلامی فوجی اتحاد کے وفد کے اراکین بھی موجود تھے۔

چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے کہا ہے کہ اسلامی فوجی اتحاد دہشت گردی کے خلاف ایک مربوط پلیٹ فام ہے۔

انکے مطابق پاکستان نے دہشت گردی کی وجہ سے بہت نقصان اُٹھایا ہے لیکن پاکستانی افواج، عوام اور دیگر اداروں نے مل کر دہشت گردی کے خلاف جنگ لڑی اور کامیابی حاصل کی۔

صادق سنجرانی نے راحیل شریف سے  ملاقات میں کہا کہ دہشت گردی کے خلاف اسلامی فوجی اتحاد سے مسلم ممالک کے علاوہ دیگر ممالک بھی فائدہ اٹھا سکتے ہیں اس اتحاد کے قیام سے دنیا سے دہشت گردی کے خاتمے میں مدد ملے گی۔

جنرل راحیل شریف نے چیئرمین سینیٹ سے ملاقات میں کہا کہ پاکستان ہمیشہ دہشت گردی کے خلاف فعال کردار ادا کرتا رہا ہے اسلامی فوجی اتحاد دنیا بھر میں دہشت گردی کے خاتمے اور قیام امن کے لیے جاری کوششوں کو مربوط بنائے گا۔

سابق آرمی چیف واسلامی فوجی اتحاد کے کمانڈر اِن چیف جنرل (ر) راحیل شریف کی  دفتر خارجہ میں وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی سے بھی ملاقات ہوئی ہے۔

ملاقات میں علاقائی امن واستحکام سمیت باہمی دلچسپی کے امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

جنرل (ر) راحیل شریف نے وزیر خارجہ کو دہشت گردی کے خلاف اسلامی فوجی اتحاد کے اقدامات سے آگاہ کیا جب کہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے علاقائی امن و سلامتی کے لیے اسلامی فوجی اتحاد کی کوششوں کو سراہا۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز اسلامی فوجی اتحاد کے سربراہ راحیل شریف نے  آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ  سے بھی ملاقات کی تھی۔

واضح رہے کہ سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی کوششوں سے اسلامی فوجی اتحاد 15 دسمبر 2015 کو تشکیل پایا تھا۔

قیام کے وقت اتحاد میں 34 ممالک شامل تھے اور وقت کے ساتھ ساتھ رکن ممالک کی تعداد 41 ہوگئی ہے۔

پاکستانی فوج کے سابقہ سپہ سالار جنرل (ر) راحیل شریف اسلامی فوجی اتحاد کے پہلے کمانڈر اِن چیف ہیں۔

اسلامی فوجی اتحاد کے قیام کا مقصد اسلامی ممالک سے دہشت گردی کے خاتمے کے لیے کوششیں کرنا ہے۔


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *