پنجاب کے نو سرحدی مقامات کی داخلی و خارجی سیکورٹی اپ گریڈ کر دی گئی

لاہور: بھارتی جنگی دھمکیوں کے بعد پاک فوج نے سول بیوروکریسی کی مدد سے بھارت سے متصل پنجاب کے نو مقامات کی داخلی و خارجی سیکورٹی کا فول پروف پلان ترتیب دے دیا۔

پرو پاکستانی اردو کو ملنے والی اطلاعات کے مطابق پلوامہ حملے کے بعد بھارتی فوج کی جانب سے جنگ کی دھمکیوں کے بعد پاکستان آرمی نے سول بیوروکریسی کے ساتھ مل کر وار بک اپ ڈیٹ کرنے کا فیصلہ کرتے ہوئے سرحدی علاقوں میں تعینات تمام کمشنرز اور ڈپٹی کمشنرز کو اعتماد میں لینے کا فیصلہ کیا ہے۔

کمشنرز اور ڈپٹی کمشنرز نے وار بک کواپ ڈیٹ کرتے ہوئے پاکستانی عوام کو محفوظ رکھنے کے لیے سرحدی مقامات کی سکیورٹی کو نئے سرے سے ترتیب دے دیا ہے۔


مزید پڑھیں

نیشنل ایکشن پلان کے تحت ملکی اور غیر ملکی این جی اوز کا سیکیورٹی آڈٹ شروع


ملٹری بیوروکریسی کی جانب سے معاملات سامنے آنے کے بعد چیف سیکرٹری پنجاب کیپٹین ریٹائرڈ اعجاز اصغر نے تمام کمشنرز اور اور ڈپٹی کمشنرز کو وار بک اپ ڈیٹ کرنے کی ہدایات جاری کیں اور ان کو حکم دیا گیا ہے کہ پاکستان ملٹری کی جانب سے آنے والی کسی بھی کال کو فوری طور پر جواب دیا جائے۔

وار بک جنگی ایام میں سویلین معاملات کو چلانے کا سیکورٹی پلان ہوتا ہے، جس کے تحت شہریوں کی جان و مال کی حفاظت کرنے کا منصوبہ تشکیل دیا گیا ہوتا ہے، بھارتی دھمکیوں کے پیش نظر پاکستان آرمی کے ذمہ داران نے سرحدی علاقوں کے کمشنرز اور ڈپٹی کمشنرز کے ساتھ متعدد میٹنگز کر کے سیکورٹی پلان سے متعلق بریفنگز دی ہیں۔


مزید پڑھیں

پاک بھارت تجارت کی بندش سے بھارتی تاجر پریشان


ذرائع کا کہنا ہے کہ سیالکوٹ، گجرات، نارووال، بھمبر، گنڈا سنگھ، واہگہ، اوکاڑہ، بہاولنگر، اور رحیم یار خان کے علاقوں میں رات کو گشت بہتر بنانے، انٹیلی جنس کو فول پروف بنانے اور بوقت ضرورت سویلین آبادی کے انخلا کو آسان بنانے کے لیے انتظامات مکمل کر لیے گئے ہیں۔


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *