جے ایف 17 تھنڈر پر ایک نظر

اسلام آباد: بھارتی فضائیہ کو دھول چٹانے والی جے ایف 17 تھنڈر فائٹر جیٹ اس وقت دنیا بھر میں مقبولیت حاصل کرچکی ہے، عالمی میڈیا پر ہر طرف جے ایف 17 تھنڈر کے چرچے ہورہے ہیں۔

معتبر ملٹری ایوی ایشن ویب سائٹ دی ایوی ایشنسٹ کا کہنا ہے مگ 21 طیارہ جے ایف 17 کا پہلا شکار ہے جب کہ امریکی آن لائین جریدے بزنس انسائیڈر کے مطابق جیسے ہی میڈیا میں بھارتی مگ گرانے کی خبریں آئیں جے ایف 17 کی تیاری میں معاونت فراہم کرنے والی چین کی کمپنی کے شیئرز کی قیمت صرف 5 منٹ میں 10 فیصد بڑھ گئی۔


مزید پڑھیں

دہشتگرد تنظیموں کے اثاثہ جات منجمند کرنے کے 2019 کے احکامات پر عملدرآمد شروع کردیا، دفتر خارجہ


جے ایف 17 تھنڈر ایک ایڈوانس، کم وزنی، ملٹی رول فائٹر جیٹ ہے جو کہ پاکستان اور چین کے مشترکہ تعاون سے بنائے گئے ہیں۔

اس کی تیاری میں پاکستان کی ائیرو ناٹیکل کمپلیس اور چین کی کامرا، چھینگدو انڈسٹری کارپوریشن نے حصہ لیا۔

یہ فضا سے فضا اور فضا سے زمین میں ٹارگٹ کو نشانہ بنانے کی صلاحیت رکھتا ہے، اس کی بنیادی ساخت کا اعلیٰ ڈیزائن اور کم وزنی اسے تقریباً 1296 کلو میٹر فی گھنٹہ کی رفتار عبور کرنے کی صلاحیت دیتا ہے۔


مزید پڑھیں

امریکی اخبار نے بھارت کی جنگی صلاحیت اور قابلیت کا بھانڈا پھوڑ دیا


2007 میں اس کی اڑان کا کامیاب ٹیسٹ کیا گیا تھا اور 23 مارچ 2007 کو یوم پاکستان کے موقع پر ان برق رفتار جیٹس کو قوم کے دفاع کے لیے پاک فضائیہ کی صفوں میں شامل کیا گیا۔

جے ایف 17 تھنڈر کے ایک یونٹ پر تقریباً 25 سے 32 ملین ڈالرز لاگت آتی ہے۔


Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *